بامسی(بابر)

ناظرین ارطغرل غازی کی زندگی پر بنائے جانے والا ڈرامہ  دریل ارطغرل اور کرلس عثمان نے سب کے دل جیتے۔دو تلواروں سے دشمن پر آندھی بن کر ٹوٹنے والے بامسی الپ کی بہادری تو سب نے دیکھی تو کیا عثمانی تاریخ میں واقع ہی کوئی ایسا شخص تھایاوہ کوئی افسانوی کردار تھا بامسی الپ اغوزترکوں کاہی اک مشہور جنگجو تھا اس کی زندگی کے بارے  میں اغوزکی اک کتاب  دےدےکرکوت میں لکھا ہو اہےدےدےکرکوت کی کہانیوں کے مطابق بامسی الپ اغوز شہزادے بیبورے بے کابیٹاتھاقدیم روایات میں ہے کہ سب اغوز شہزادے اک جگہ اکٹھے ہوے ان میں بیبورے بے واحد شخص تھاجس کی کوئی اولاد نہ تھی وہ اس مجمے رو پڑا اس کے بعد اسکا قبیلہ تباہ ہو جائے گااسکانہ کوئی بھائی ہے نہ کوئی بیٹااس کی حالت دیکھ کر سب شہزادوں نے اللہ سے دعاکی کہ اللہ بیبورے بے کو نرینہ اولاد عطاکرےاس موقعہ پر اک اور شہزادے بیبچن نے بھی دعاکروائی کچھ عرصے بعد دونوں شہزادوں کو اولاد نصیب ہوئی بیبورے بے کے گھر اک بیٹا پیداہوابیبچن کے گھر بیٹی پیدا ہوئی کچھ عرصے بعد بیبورے بے نے اپنے کچھ غلاموں کوقسطنطنیہ بجھاکہ وہ میرے بیٹے کے لیے تحفے لے کر آئیں۔ سفر ذیادہ تھا تو ان کی واپسی سالوں بعد ہوئی  وہ انتہائی مہنگی اشاہ لے کر واپس آ رہے تھےارزروم میں اپنے قبیلے سے تھوڑی دورایونکے کے قلعہ سے ان پر حملہ ہو گیالیکن وہاں اک نوجوان نے اپنے دونوں ہاتھوں سے تلوار چلانے والے نے نہ صرف ڈاکووں کو مار ا اور ان قافلے والوں کو بچالیااس نوجوان کی مہارت دیکھ کر قافلے والے بہت متاثر ہوئےیہ نوجوان ان سے رخصت لے کر قبیلہ چلا گیااور اپنے باپ کے خیمہ میں جا کر بیٹھ گیاقافلہ جب قبیلے پہچا تو بیبورے بے کے خیمہ میں گئے تو اس نوجوان کو بیبورے بے کے ساتھ بیٹھ دیکھ کر ابہوں نے اس کے ہاتھ چومنا شروع کر دیئے اس پر بیبورے بے نے برہم ہو کر کہا یہ کون سی روایات ہے کہ باپ کے ہوتے ہوے آپ میرے بیٹے کے ہاتھ چوم رہے ہواس وقت انہوں قافلے والی ساری صورتہال بتائی کہ کیسے اس نوجوان نے ہمیں ڈاکووں سے بچایا۔اس کا باپ بہت خوش ہوااس وقت تک اسنے اپنے بیٹے کا کوئی نا م نہیں رکھاتھااس قافلے والوں نے ان دشمنوں کے سر اوڑانےکی وجہ سے اسے بامسی الپ کہاجس کے بعد یہی اسکانام پڑگیابامسی الپ نے قفقاس سے لے کر اناطولیاتک بہت سی لڑائیاں لڑیں۔وہ بہادر ہونے کے ساتھ ساتھ بہت نرم دل اور بہت مزاحیہ بھی تھا۔اسکی شادی بیبچن کی بیٹی بانو چیچک سے ہوئی جو کہ  اسی کی طرح اغوز شہزادوں کی دعووں سے پیدا ہوئی تھی تاریخی ترک کتابوں میں ان دونوں کواغوز کے کرشماتی بچے تصلیم کیا جاتا تھاشادی رات ہی اس کے خیمہ پر حملہ ہوااور اسے اونیک قلعہ میں قید کر لیا گیابامسی الپ سولہ سال اس قیلہ میں قید رہاکچھ لوگ کہتے ہیں کہ اس قیلہ کی شہزادی نے اس کی مدد کی اور اسکو جیل سے بگھا دیاجبکہ چن کوگوں کا کہنا ہے کہ اس قلعہ کی شہزادی جس کا نا الینہ بتایا گیا ہےاسکی  محبت میں گرفتار ہو گئی اور اس کو وہاں سے لے کر بھاگ گئی اور بعد میں اس سے اس کی شادی ہو گئی دریل ارطغرل میں بھی اس کو دیکھایا گیاہے کہ بامسی الپ کو الینہ نامی شہزادی پسند آہ جاتی ہے جس سے وہ شادی کر لیتا ہےیہاں یہ بات بھی بتانا بہت ظروری ہے کہ بامسی الپ ڈرامہ دریل ارطغرل غازی اور عثمان غازی  سے کبھی نہیں ملا  بلکے اس کے بہت پہلے دور میں گزرا ہے ڈرامہ دریل ارطغرل میں اس کا کردار اس لیے دیکھایا گیا ہے تاکہ عزیم بہادر ترک کو خراجے تحسن پیش کیا جا سکےبامسی الپ کی قبر اناطولیہ کے قریب ہےدریل ارطغرل میں مقبولیت کے بعد لوگ اس کی قبر پر جانا شروع ہو  گئے تھے تو اب حکومت نے اس کی قبر پر مظار بنا دیا ہے اور لوگ بہت تعداد میں وہاں جا کر فاتہ خانی پڑتے ہیں۔

اور آخر میں اللہ اس بہادر کے درجات بلند فرمائے ۔

امین

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *